Home | Columns | Poetry | Opinions | Biography | Photo Gallery | Contact

لغت وہی ہے فقط معانی بدل رہا ہوں

لغت   وہی   ہے   فقط   معانی  بدل  رہا  ہوں

تمہارے   دریاؤں   کا  میں پانی بدل رہا ہوں


سنو   علاقے   ہیں   اور بھی یادِ رفتگاں کے

سنو   میں   اندازِ  نوحہ خوانی بدل رہا ہوں


وہی   ہیں   عیّار   اور  زنبیل  بھی  وہی  ہے

مگر  میں   بغداد   سے  کہانی  بدل رہا ہوں


وہ   آ ئے   گا   تو ستارہ اپنی جگہ نہ ہو گا

اُسے  بتائ   تھی   جو نشانی   بدل رہا ہوں


لباس  تھ ا  ہی   نہیں   میسّر    جسے  بدلتا

برہنگی  ہو گئ    پرانی     بدل     رہا    ہوں


جواں تو بیٹے  ہوئے  ہیں، رکھّے خدا سلامت

مجھے  لگا  جیسے میں جوانی  بدل رہا ہوں


پرند  میرے  وزیر ،   جگنو   سفیر   ہوں   گے

میں   اپنا   اندازِ   حکمرانی  بدل   رہا   ہوں


میں خاک کے فرش پر ہوں، دستِ دعا اُٹھائے

وہ فیصلے جو ہیں آسمانی ،  بدل  رہا   ہوں

2 comments:

Anonymous said...

Very beautiful Ghazal

Anonymous said...

نہایت عمدہ

Post a Comment

 

powered by worldwanders.com