Home | Columns | Poetry | Opinions | Biography | Photo Gallery | Contact

نعت



مدینے کی   ہوا   ہے   اور   رخساروں   پہ   پانی
کوئی ایسی  لغت  جس  میں  سنائوں  یہ  کہانی


تھمابھی ہے کبھی کیا سیل انسانوں کا اس میں
پریشاں   ہے   مدینے  میں  ابد   کی   بے   کرانی


برہنہ  پا   کھڑی  ہے  رات   پتھر  کی  سلوں  پر
سروں پرصبح صادق نے  عجب  چادر  ہے  تانی


یہاں مٹّی  میں  کنک  لعل  اور  یاقوت  کے  سب
درختوں   پر   یہاں   سارے     پرندے    آسمانی


ہوا اس شہر کی  جنت  کے  پھولوں  نے   بنائی
گدا اس  شہر  کے  میں  اور  سعدی  اور  قآنی
(ضرورتِ شعری کے تحت قا آنی کو قآنی باندھا ہے) 


مرے   آقا   کے   چاکر  اور  کیکائوس  کا  تخت
مرے   مولا   کے   خدمت  گار   اور   تاجِ  کیانی


مطہّر  جسم  پر  دیکھو  چٹائی  کے  نشاں  ہیں
چٹائی کے نشاں  اور  دو  جہاں  کی  حکمرانی



کہاں تھا وقت میں جب  جالیوں  کے سامنے تھا
مجھےاس نے سمجھ رکھاہے کس برتے پہ فانی


کہاں میں اورکہاں یہ فرش اورپلکوں کی جاروب
زہے  قسمت  کہ  میں  نے  لوٹ  لی  یہ  میہمانی


کہاں  یہ  گنبد  خضرا   کہاں   بینائی  میری
کہاں قلاّش مجھ سا اور کہاں یہ شہ جہانی


اسی   دہلیز    پر    بیٹھا    رہے    میرا   بڑھاپا
انہیں کوچوں میں گذرے میرے بچوں کی جوانی


رہے میرا وطن  اس  شہر  کے  صدقے  سلامت
قیامت   کے  طلاطم   میں   یہ  کشتی   بادبانی


مرے دشمن مرا کشکول چھپ کر دیکھتے ہیں
غلامانِ   محمد    کی    سخاوت ،    مہربانی


مرے آبِ  وضو  سے  بھیگتی  ہے  رات   اظہار
مری آنکھوں سے کرتے ہیں  ستارے  دُرفشانی

2 comments:

Mohamed Haneef Katib said...

SubhanAllah, JazakAllah

Anonymous said...

a great naat

Post a Comment

 

powered by worldwanders.com